معروف آسٹریلوی سائینسدان آج خودکشی کر لیں گے، خود کشی کرنے کی حیران کن وجہ بھی بتا دی

لاہور: 104 سالہ مشہور آسٹریلوی سائنسدان ڈاکٹر ڈیوڈ گوڈال نے خود کشی کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔اور ڈاکٹر ڈیوڈ گوڈال خودکشی کرنے کے لیے سوئزر لینڈ پہنچ گئے ہیں۔چند روز قبل معروف سائنسدان ڈاکٹر ڈیوڈ گوڈال نے آج کے دن خودکشی کرنےکا اعلان کیا تھا۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق ماہر نباتات و ماحولیات ڈاکٹر ڈیوڈ گوڈال سوئزر لینڈ کے شہر باسل میں خود کشی کرنے کے لیے پہنچ گئے ہیں۔

کیونکہ اس شہر میں خود کشی کرنے کے لیے لوگوں کو باقاعدہ مدد فراہم کی جاتی ہے۔ ڈاکٹر ڈیوڈ گوڈال ایک پریس کانفرس کے زریعے سب کو آگاہ کیا تھا کہ وہ خود کشی کرنے جا رہے ہیں۔ ڈاکٹر ڈیوڈ گوڈال کے مطابق وہ اونچا سنتے ہیں اور ان کی نظر بھی کمزور ہے۔تاہم ان کا ذہن اب بیدار ہے۔ ڈاکٹر ڈیوڈ گوڈال دنیا بھر میں گھومتے تھے اور پھر تحقیق کرتے تھے۔
لیکن اب وہ وھیل چئیر کے محتاج ہو گئے تھے۔ تا ہم اب ان کا کہنا ہے کہ وہ پچھلے پانچ دس سالوں سے زندگی کا لطف نہیں اٹھا رہے۔ان کو کہنا تھا کہ موت کا تعین کرنے کے لئے انسان کو آزاد ہونا چاہئیے۔ ڈاکٹر ڈیوڈ گوڈال کا مزید کہنا تھا کہ بیس سال پہلے جب ان کا ڈرائیونگ لائنسس منسوخ کیا گیا تھا تب ہی ان کو مر جانا چاہئیے تھا۔تاہم میں اب وہ اپنی زندگی کو جاری نہیں رکھنا چاہتا۔
یاد رہے کہ سوئزر لینڈ دنیا کا واحد ملک ہے جہاں انتہائی علیل، ذہنی و جسمانی طور پر معذور طویل العمر اور لاغر بوڑھے افراد کو آسان موت یعنی رضاکارانہ موت فراہم کی جاتی ہے تاکہ وہ اپنی بے قرار اور تنگ زندگی کا خاتمہ آسانی سے کرسکیں۔۔ڈاکٹر ڈیوڈگوڈال کو سوئٹرلینڈ کے ایٹرنل اسپرٹ کلینک میں آج ایک انجیکشن لگا کر یا زہر کا گھونٹ پلا کر ابدی نیند سلایا جائے گا۔
یہ خبر جس ویب سائٹ سے لی گئی ہے اس کا لنک یہاں ہے. شکریہ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.