سپیڈوبسوں پر شہباز شریف کی تصاویر، پنجاب حکومت کے ساتھ کیا سلوک کیا جائے؟ ہائی کورٹ سے بڑی بریکنگ نیوز آ گئی

لاہور(ویب ڈیسک) ہائیکورٹ میں وزیر اعلیٰ شہباز شریف کی تصاویر سپیڈو بسوں سے اتارنے کا کیس داخل کر لیا گیا ہے۔ عدالت نے درخواست کے قابل سماعت ہونے سے متعلق فیصلہ محفوظ کرلیا ہے۔لاہور ہائیکورٹ میں شہری اظہر عباس کی جانب درخواست دائر کی گئی تھی کہ شہباز شریف کی تصاویر سپیڈو بسوں سے اتاری جائیں۔ درخواست دائر کا موقف تھا کہ شہباز شریف کی تصاویر بسوں میں لگا کر ان کی تشہیر کی جا رہی ہے جس سے قومی خزانے کو نقصان پہنچ رہا ہے۔

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شاہد کریم نے وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کی تصاویر سپیڈو بسوں سے اتارنے کیلئے درخواست کے قابل سماعت ہونے کے بارے میں درخواست فیصلہ محفوظ کر لیا ہے۔ درخواست میں الزام لگایا گیا کہ حکمران ذاتی تشہیر کیلئے قومی خزانے کا استعمال کر رہے ہیں۔ جس میں سپیڈ بسوں پر وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کی تصاویر لگانے کے اقدام کو چیلنج کیا گیا ہے۔درخواست گزار نے بتایا کہ سپیڈو بسوں پر وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کی تصاویر لگائی گئی ہیں اور اسطرح وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے ذاتی تشہیر کے لیے عوام کے ٹیکس کا پیسہ استعمال کیا ہے۔درخواست گزار کے مطابق پنجاب حکومت عوام کو صحت اور تعلیم کی سہولت فراہم کرنے کے بجائے قومی خزانے کا غیر ضروری معاملات پر استعمال کر رہی ہے اور،

عوام کے پیسے کو ان پر استعمال کرنے کے بجائے حکمران ذاتی تشہیر کیلئے استعمال کر رہے ہیں۔درخواست نے بتایا کہ سپریم کورٹ نے حکمرانوں کے سرکاری خزانے سے اشتہارات پر ازخود نوٹس لیا۔درخواست گزار نے استدعا کی کہ سرکاری سپیڈو بسوں سے وزیر اعلیٰ شہباز شریف کی تصاویر والے اشتہارات اتارنے کا حکم دیا جائے۔ ہائیکورٹ نے درخواست گزار کے موقف سننے کے بعد درخواست کے قابل سماعت ہونے پر فیصلہ محفوظ کر لیا۔
یہ خبر جس ویب سائٹ سے لی گئی ہے اس کا لنک یہاں ہے. شکریہ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.