جنرل صاحب مریم نواز اور نوازشریف فوج کو گالیاں دے رہے ہیں ۔۔۔ فوج انکو کب جواب دے گی؟ صحافی کے خطرناک سوال پر جنرل غفور نے ایسا جواب دیا کہ شریف فیملی میں کھلبلی مچ گئی

جنرل صاحب مریم نواز اور نوازشریف فوج کو گالیاں دے رہے ہیں ۔۔۔ فوج انکو کب جواب دے گی؟ صحافی کے خطرناک سوال پر جنرل غفور نے ایسا جواب دیا کہ شریف فیملی میں کھلبلی مچ گئی

راولپنڈی (نیوز ڈیسک) ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے خواجہ سعد رفیق کے آرمی چیف سے متعلق بیان کو غیر ذمہ دارانہ قرار دے دیا اور اگر نواز شریف کے خلاف کوئی سازش ہوئی تو وہ ثبوت کے ساتھ بتائیں کیا سازش ہے ۔راولپنڈی میں پریس بریفنگ کے دوران صحافی نے ڈی جی آئی ایس پی آر سے سوال کیا کہ نواز شریف اور مریم نواز اپنے بیانات میں پاک فوج پر الزامات لگا رہے ہیں ،الزامات کا یہ سلسلہ یکطرفہ ہے ، اب تک نواز شریف کافی لوگوں کی ذہن سازی کر چکے ہیں، کیا پاک فوج الزامات کا جواب دینے کے لیے مناسب وقت کا انتظار کر رہی ہے ؟

اس سوال پر جواب دیتے ہوئے میجر جنرل آصف غفور باجوہ نے کہا کہ یہ سیاسی سوال ہے میں اس پر خاموشی برقرار رکھوں گا ۔ان کا کہنا تھاکہ پاک فوج چیلنجز کو جانتی ہے اور اپنی کامیابیوں کو گنوانا نہیں چاہتی ،ملک میں سیاسی سرگرمیاں چل رہی ہیں ۔انہوں نے کہا کہ پاک فوج اس طریقے سے ایسے الزامات کا رد عمل نہیں دےنا چاہتی ،اگر ان کے خلاف کوئی سازش ہوئی ہے تو وہ ثبوت لے کر سامنے آئیں ۔اس دوران ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ خواجہ سعد رفیق نے غیر ذمہ دارانہ بیان دیا ،پاک فوج آرمی چیف کے ایک اشارے پر کام کرتی ہے ۔ دوسری جانب عوامی مسلم لیگ کے سربراہ کا اسلام ٹائمز کیساتھ انٹرویو میں کہنا تھا کہ حکمرانوں نے ختم نبوت کے معاملے میں ایک سے زیادہ بار غلط بیانی کی، حقائق چھپائے اور معاملات درست کرنیکی نیم دلانہ کوششیں کیں، وہ بھی اُسوقت جب حالات دن بدن بگڑتے گئے، قابو سے باہر ہوتے گئے، کسی بھی مرحلے پر اپنی غلطی تسلیم نہیں کی گئی۔ جو دھرنے چل رہے ہیں، مجھے خدشہ ہے کہ بہت زیادہ خون خرابہ ہوگا، ابتدا میں تسلسل سے یہ تاثّر دیا جاتا رہا کہ ختمِ نبوت کے حلف نامہ میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی، اسے ڈھٹائی بھی کہا جا سکتا ہے، حکومتی وزراء بار بار ٹی وی پر آکر عوام کو گمراہ کرتے رہے، وزیر ِقانون کچھ کاغذ بھی دکھاتے اور دعویٰ کرتے کہ انتخابی قانون میں کچھ بھی بدلا نہیں گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.