اسحاق ڈار کی پاکستان آمد ، (ن) لیگی حکومت کیا دھماکہ کرنے والی ہے؟ تازہ ترین خبر آ گئی

اسحاق ڈار کی پاکستان آمد ، (ن) لیگی حکومت کیا دھماکہ کرنے والی ہے؟ تازہ ترین خبر آ گئی

لاہور (ویب ڈیسک) سابق وزیرخزانہ اسحاق ڈار کی جلد پاکستان آمد ہو رہی ہے اور نیب عدالت میں پیش بھی ہوں گے ۔ذرائع کے مطابق اسحاق ڈار کی واپسی اگلے ہفتے متوقع ہے یہ امکان بھی ظاہر کیا جا رہا ہے کہ اسحاق ڈار وزیرخزانہ کی کرسی پھر سے سنبھالیں گے۔

اس سے قبل وفاقی وزیرخزانہ اور سابق وزیراعظم نوازشریف کے سمدھی اسحاق ڈار کے خلاف آمدن سے زیادہ اثاثوں کے نیب ریفرنس کی سماعت ہوئی جس کے دوران تین گواہوں کے بیان قلمبند کیے گئے۔ اسلام آباد میں احتساب عدالت کے جج محمد بشیر اسحاق ڈار کے خلاف اثاثہ جات ریفرنس کی سماعت کی۔احتساب عدالت میں سماعت کے آغاز پر استغاثہ کے گواہ نجی بینک کے افسرفیصل شہزاد نے اپنا بیان ریکاڑد کروایا اور سابق وزیرخزانہ کی اہلیہ تبسم اسحاق ڈار کے اکاﺅنٹس کی تفصیلات عدالت میں پیش کیں۔ بعدازاں ڈائریکٹر قومی اسمبلی شیر دل خان نے عدالت میں اپنا بیان ریکارڈ کروایا اور بتایا کہ اسحاق ڈار این اے 95 لاہور سے 1993 میں منتخب ہوئے۔انہوں نے بتایا کہ اسحاق ڈارنے 16 دسمبر1993 کو بطور ایم این اے حلف اٹھایا، اسحاق ڈار4 نومبر1996 تک ایم این اے رہے۔گواہ شیردل خان نے عدالت کو بتایا کہ رکن قومی اسمبلی بننے والے کو تنخواہ کی ادائیگی شروع ہوجاتی ہے، 1993 میں اسحاق ڈار 14 ہزار ماہوار تنخواہ لیتے تھے۔واضح رہے کہ نیب عدالت نے وزیرخزانہ کو اشتہاری قرار دےرکھا ہے اور اس حوالے سے انہیں نوٹس بھی جاری کر دیا گیا ہے ۔ وزیرخزانہ اسحاق ڈار کچھ عرصے سے ٓعلاج کی غرض سے لندن میں مقیم ہیں اور اطلاعات موصول ہو رہی تھیں کہ وہ علاج کے لئے کچھ عرصہ لندن میں قیام کریں گے.

لیکن اب انہوں نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ پاکستان بھی آئیں گے اور نیب عدالت میں پیش بھی ہوں گے۔جبکہ دوسری جانب نجی ٹی وی پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے معروف صحافی حامد میر نے دعویٰ کرتے ہوئے کہا کہ آنے والے دنوں میں پاکستانی سیاست میں کچھ ڈویلپمنٹس سامنے آنے والی ہیں اور اس میں عدلیہ کے کردار پر پوری قوم نظریں لگائے بیٹھی ہے۔انہوں نے انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ اسحاق ڈار کو انٹرپول کے ذریعے واپس لانے کی صورت میں پرویز مشرف کو بھی انٹرپول کے ذریعے واپس لانے کا مطالبہ سامنے آسکتا ہے۔حامد میر نے کہا کہ اسحاق ڈار کو بے شک ریڈ وارنٹ کے ذریعے واپس لے آئیں مگرآپ نواز شریف اور مسلم لیگ ن کے اس موقف کا کیا کریں گے آپ انہیں پھر ایسا کرنے سے نہیں روک سکتے اور اسحاق ڈار کی انٹرپول کے ذریعے واپسی کی صورت میں ن لیگ کا ووٹر تو چلو حمایت کرے گا ہی کرے گا مگر جو لوگ ن لیگ کے سپورٹر نہیں وہ بھی یہ بات پوچھیں گے پھر کہ ایک شخص جس پر قتل کے، آئین سے غداری کے مقدم تھے کیا اس کا کسی نے احتساب نہیں کرنا؟اور وہ شخص پرویز مشرف ہے۔ پھر ہو گا یہ کہ عمران خان اور پیپلز پارٹی جلسے کرتے رہ جائیں گے اور نواز شریف کا موقف مقبول ہو جائے گا پھر چاہے 2018میں کوئی بھی حکومت بنائے وہ حکومت نہیں چل سکے گی کیونکہ پرویز مشرف نواز شریف کی سب سے بڑی طاقت کے طور پر سامنے آگئے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.