یار میں بھاگنے والوں میں سے نہیں ، وطن پر جان قربان کردوں گا!! شہادت سے دو روز قبل شہید لفٹیننٹ عبدالمعید کی اپنے دوست کے ساتھ کیا گفتگو ہوئی؟ رلا دینے والی تفصیلات سامنے آگئیں

یار میں بھاگنے والوں میں سے نہیں ، وطن پر جان قربان کردوں گا!! شہادت سے دو روز قبل شہید لفٹیننٹ عبدالمعید کی اپنے دوست کے ساتھ کیا گفتگو ہوئی؟ رلا دینے والی تفصیلات سامنے آگئیں

لاہور (نیوز ڈیسک) کل جام شہادت نوش کرنے والے سیکنڈ لفٹیننٹ عبدالمعید نے آخری بار اپنے دوست سے گفتگو کی اور آخری بار ایسی باتیں کی کہ پڑھ کر آپ کی آنکھوں میں آنسو آجائیں گے اورآپ کو بھی یقین ہوجائے گا کہ کتنا بہادر اور ہمت والا انسان تھا۔ لفٹیننٹ عبدالمعید کے دوست نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ” یار اپنی تصویر بھیجو اور وائس میسج بھیجا کرو” دوست نے پھر کہا کہ تم بھائی ہو تمہاری فکر رہتی ہے تو اس کے جواب میں لفٹیننٹ عبدالمعید نے ہنستے ہوئے جواب دیا کہ تم ایسا اس لیے کہہ رہے ہو تا کہ تمہارے پاس میری تصاویر یاد گار رہ

سکیں لفٹیننٹ عبدالمعید نے مزید کہا کہ یار “جان اگر کسی مقصد اور قوم کی خاطر دینی بھی پڑی تو دیں گے کبھی نہ نہیں کریں گے”۔ واضح رہے کہ پاکستان کے قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں دہشتگردوں نے فوج کی گاڑی کو نشانہ بنایاجس کے نتیجے میں سیکنڈ لفٹیننٹ عبدالمعید اور سپاہی محمدبشارت شہید ہو گئے۔ترجمان پاک فوج میجر جنرل آصف غفور کے مطابق پہاڑی علاقے میں چھپے دہشتگردوں نے پیر کی رات گیارہ بجے پاک فوج کی گاڑی پر اس وقت حملہ کیا جب گاڑی احمد خیل بویا سے علی خیل کی جانب جا رہی تھی۔ حملہ کے نتیجے میں پاک فوج میں اپنی پہلی پوسٹنگ پر جانے والا 21سالہ عبدالمعیدشہید ہو گیا۔جبکہ تین برس قبل پاک فوج میں شمولیت اختیار کرنے والے گلگت کے گاوں ڈینیور کے رہائشی 21سالہ سپاہی محمد بشارت نے بھی جام شہادت نوش کیا۔ شہید افسر سیکنڈ لیفٹیننٹ عبدالمعید کا تعلق پنجاب کے شہر بورے والہ سے تھا جو حال ہی میں پی ایم اے لانگ کورس سے پاس آوٹ ہوا تھا ۔ جبکہ دوسری جانب شمالی وزیرستان میں دہشت گردوں کی فائرنگ سے شہید سیکنڈ لیفٹیننٹ عبدالمعید کی نماز جنازہ ادا کردی گئی۔ نجی ٹی وی کے مطابق پاک فوج کے 21 سالہ سیکنڈ لیفٹیننٹ عبدالمعید شہید کی نمازجنازہ ایوب اسٹیڈیم میں ادا کردی گئی۔ نمازجنازہ میں کورکمانڈرلاہور لیفٹیننٹ جنرل عامر ریاض، گیریزن کمانڈر سمیت پاک فوج کے افسر اور جوان شریک ہوئے۔ سیکنڈ لیفٹیننٹ عبدالمعید کا تعلق بورے والا وہاڑی سے تھا، وہ حال ہی میں پاکستان ملٹری اکیڈمی کاکول سے تربیت مکمل کر کے محاذ پر پہنچے تھے۔ سپاہی بشارت کی عمر بھی 21 سال تھی اوروہ گلگت کے گاؤں ڈینیور کے رہائشی تھے جو تین سال پہلے فوج میں بھرتی ہوئے تھے۔ واضح رہے کہ گزشتہ روز شمالی وزیرستان کے پہاڑی علاقے میں چھپے دہشت گردوں نے فائرنگ کرکے فوجی گاڑی کو نشانہ بنایا تھا جس کے نتیجے میں دونوں جوان شہید ہوگئے تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.