ڈپٹی کمشنر گوجرانوالہ سہیل احمد ٹیپو کی پوسٹ مارٹم رپورٹ منظر عام پر آ گئی، جسم پر گیارہ زخم، کیا سلوک کیا گیا؟ چونکا دینے والے انکشافات، کیس نیا رخ اختیار کر گیا

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) ڈپٹی کمشنر گوجرانوالہ سہیل احمد ٹیپو کی پراسرار ہلاکت کی تفتیش نے ایک نیا رخ اختیار کر لیا ہے، ایک نجی ٹی وی چینل کی رپورٹ کے مطابق سہیل ٹیپو کی گردن اور کلائیوں پر زخم کے نشانات نے تفتیش کا رخ موڑ دیا ہے، نجی ٹی وی نے پوسٹ مارٹم رپورٹ کے حوالے سے بتایا کہ ڈپٹی کمشنر سہیل ٹیپو کی گردن پر دو گہرے نشانات پائے گئے ہیں اور گردن پر خراشوں کی تعداد چھ بتائی جا رہی ہے، سہیل ٹیپو کی دونوں کلائیوں پر بھی

زخموں کے نشانات موجود تھے اور پوسٹ مارٹم رپورٹ کے مطابق ان کے جسم پر زخموں کے گیارہ نشانات پائے گئے۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ واقعہ میں استعمال ہونے والی تار اور کپڑا پولیس نے میڈیکل آفیسر کو نہیں دکھایا، رپورٹ میں بتایا گیا کہ دل، جگر اور دیگر جسمانی اعضاء کے نمونے بھی میڈیکل آفیسر نے حاصل کر لیے ہیں جنہیں فرانزک لیبارٹری بھیجا جائے گا۔ پوسٹ مارٹم رپورٹ کے مطابق موت اور زخموں کے درمیان تقریباً آدھے گھنٹے کاوقفہ تھا۔

یہ خبر جس ویب سائٹ سے لی گئی ہے اس کا لنک یہاں ہے. شکریہ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.